پاکستانی کرکٹ کے سینے پر ایک اور تمغہ

لاوہور (این اے) کھیل کے میدان میں تیز ترین رنز بنانے ہوں، یا تیز ترین گیند پھینکنے کا ریکارڈ  پاکستان کے نام کرکٹ کے بہت سے اعزازات درج ہیں۔ اب ان ریکارڈ میں ایک اور اضافہ ہو گیا ہے۔

یہ اعزاز آئی سی سی سے منظور شدہ بائیو مکینیکل لیب کا ہے۔ مشکوک  ایکشن  کے  ٹیسٹ  اور  اسکی  درستی کے  لیے  اب  سات  سمندر  پار ، یا ، بیرون ملک جانے  کی  کوئی  ضرورت نہیں کیونکہ  پاکستان  کی پہلی  اور  دنیا  کی  چھٹی  بائیو  مکینیکل  لیب  کو  انٹرنیشنل  کرکٹ  کونسل  کی  منظوری  مل  گئی  ہے۔

پی  سی  بی  کے  تعاون  سے  لاہور  یونیورسٹی  آف  میجنمنٹ  سائسنز  میں  بنائی  گئی  بائیومیکنکل  لیب میں  تھری  ڈائمنشنل موشن اینالیسزسسٹم  لگایا  گیا  ہے  جس  میں بارہ(12)  موشن  کیپچر ہائی اسپیڈ  انفریڈ  کیمرے  نصب  کیے  گئے ہیں۔ لیب  میں  آئی  سی  سی  کا  منظور  شدہ  سافٹ  وئیر  بھی  انسٹال  کیا  گیا  ہے  جس  سے  نہ  صرف  باؤلرز  کے  ایکشن  میں  درستی  کی  جاسکے  گی بلکہ  دیگر  کھلاڑی  بھی  اپنی تکنیکی  خامیوں  کو تجربہ  کار  ماہرین کی  نگرانی  میں دور  کرسکیں  گے۔

پرائیوٹ  پارٹنر شپ  کے  تحت  یہ  منصوبہ  سال  دوہزار  آٹھ (2008)  میں  شروع  کیا  جانا  تھا  جس میں چار لاکھ  ساٹھ  ہزار  امریکی  ڈالرز کی  مالیت کا  سامان  بھی  خریدا  گیا  لیکن لیبارٹری کی تعمیر اور بد انتظامی کے باعث منصوبہ  تاخیر کا شکار ہوگیا اور پاکستان  نے ایشیا  کی پہلی  بائیو  میکنکل  لیب  بنانے کا  اعزاز  بھی  کھودیا۔

دوہزار  تیرہ (2013)  میں  بھی  منصوبے  پر  کام  شروع  کرنے  کی  کوششیں کی  گئی  لیکن  ذکاء  اشرف  اور  نجم  سیٹھی  کے  درمیان  عہدے  کی  چپقلش  کے باعث معاملہ ایک بار پھر کھٹائی میں پڑ گیا ۔

پھر سال دوہزار سولہ (2016)  میں  شہریار  خان  کی  چیئرمین  شپ  میں  منصوبے  کو  عملی  جامعہ  پہنادیا  گیا  اور  اسی  سال  مئی  میں  اس  کا  افتتاح  کیا  گیا۔  جہاں  اب  تک  بیس (20)  سے  زائد  ڈومسٹک  کرکٹرز  اور  ایک  غیر  ملکی  کھلاڑی  جیمز  نوشے  کا  مشکوک  ایکشن  ٹیسٹ  کیا جا چکا ہے۔

لمز  بائیو  مکینیکل  لیب  کے  علاوہ  دنیا  میں  آئی  سی  سی  سے منظور  شدہ  پانچ  لیبز موجود  ہیں.  سال  دوہزار  تیرہ(2013)  میں  آسٹریلیا  کی  شہر  برسبن  میں  قائم  نیشنل  کرکٹ  سنٹر  میں بائیو  مکنینکل  لیب  کا  افتتاح  کیا  گیا  تھا  جسے  دو  ہزار  چودہ (2014) میں  آئی  سی  سی  کی  منظوری  ملی۔

اسی  سال انگلینڈ کی  کارڈف  میٹروپولیٹن  یونیورسٹی اور  بھارت  کی  سری  راما  چندرا  یونیورسٹی  میں موجود لیبز آئی سی سی سے رجسٹر ہو گئیں۔

جنوبی  افریقہ کی یونیورسٹی  آف  پریٹوریا  میں  قائم  بائیو  مکینکل  لیب  کو  دوہزار  پندرہ  (2015)میں  انٹرنیشنل  کرکٹ  کونسل  سے  الحاق  ہونے  کا  اعزاز  ملا ۔

دوہزار  پندرہ)2015)  میں ہی آئی  سی  سی  نے  انگلینڈ  میں  دوسری  بڑی  بائیو  مکنیککل  لیب  کی  منظوری  دی  جو  لاگ  بورو  یونیورسٹی  میں  بنائی  گئی  ہے۔

پاکستان  کو  بائیو  مکینیکل  لیب  کی  ضرورت  اس  وقت  پڑی  جب  ٹیم گرین کے  متعدد  باولرز  کے  ایکشن  رپورٹ  ہونا  شروع  ہوئے۔  دو ہزار ایک(2001) میں سابق  ٹیسٹ  کرکٹر  اور  دنیا  کے  تیز  ترین  فاسٹ  باولر  شعیب  اختر کا ایکشن مشکوک قرار پایا تھا۔

دو ہزار پانچ(2005) میں سابق فاسٹ بالر شبیر احمد اور حال ہی میں انٹرنیشنل کرکٹ سے ریٹائر ہونے والے آل راأنڈر شعیب ملک کا ایکشن رپورٹ ہوا۔

مایہ  ناز  آف  سپنر  سعید  اجمل  کا  بولنگ  ایکشن  دو  ہزار  چودہ (2014) میں رپورٹ  ہوا اور انہیں پابندی کا بھی سامنا کرنا پڑا۔

ٹیسٹ  کرکٹر  محمد  حفیظ  بھی  تین  بار  اپنا  ایکشن  درست  کرانے  کے  لیے  بیرون  ملک  جاچکے  ہیں۔۔ پہلی  بار دو ہزار پانچ(2005) میں انکا بالنگ ایکشن مشکوک قرار دیا گیا ،،، دو  ہزار  چودہ (2014)  اور  پھر  سال  دو ہزار  سترہ (2017)  میں  بھی  مشکوک  ایکشن  کے  باعث  محمد حفیظ کو پابندی  کا  سامنا  کرنا  پڑا  ہے۔

پاکستان کی لمز یونیورسٹی کی بائیو مکینیکل لیب کو انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کی جانب سے منظوری کی سند ملنا پوری قوم کیلئے فخر کا مقام ہے۔ لیب سے نہ صرف پاکستانی بلکہ دنیا بھر کے کرکٹرز اپنا ٹیسٹ کرا سکیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *