احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کو کام سے روک دیا گیاہے، وزیر قانون

وفاقی وزیر قانون بیرسٹر فروغ نسیم نے کہاہے کہ احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کو کام سے روک دیا گیاہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ کی طرف سے وزارت قانون کو رپورٹ کرنے کا کہاہے۔تاہم انہیں ہٹانے کی منظوری صدر مملکت دیں گے۔

وزارت قانون کو اسلام آباد ہائیکورٹ کا خط ملا ہے جس میں جج ارشد ملک کا بیان حلفی بھی لف کیا گیاہے۔ جج ارشد ملک نے اپنے بیان حلفی میں لکھا ہے کہ انہیں رشوت دینے کے ساتھ ساتھ دھمکیاں بھی دی گئی ہیں۔

بیرسٹر فروغ نسیم نے کہا کہ جج کی وڈیو کے حوالےسے کارروائی ہوگی۔ جب تک اس شاخسانے کا کوئی فیصلہ اسلام آباد ہائیکورٹ نہیں کرتی تو چاہے وزارت قانون ہو یا کوئی اور اتھارٹی اس پر کچھ نہیں کرسکتی۔

انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملزم کی سزا آٹو میٹک نہ بڑھائی جاسکتی ہے اور نہ ہی ختم کی جاسکتی ہے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ دیکھے گی کہ العزیزیہ کیس کا فیصلہ دباؤ میں دیا گیاہے ۔ یہ فیصلہ عدالت نے کرنا ہے۔

بیرسٹر فروغ نسیم نے کہا کہ حکومت قانون کے ساتھ کھڑی ہے۔ ہم کسی کی فیور نہیں کرینگے۔ یہ اجازت بھی کسی کو نہیں دی جاسکتی کہ وہ عدالتوں کو ڈرائے دھمکائے اس حوالے سے قوانین موجود ہیں۔سماعت کے دوران جج پر دباؤڈالنے کے الزام میں دس سال سزا دی جاسکتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *